گوگل کی فلائنگ ٹیکسی نے آزمائشی پرواز کر ڈالی

42

ویلنگٹن: گوگل کے شریک بانی لیری پیج کے اشتراک سے بنائی گئی بغیر پائلٹ خودکار فلائنگ ٹیکسی نے نیوزی لینڈ میں آزمائشی پرواز کر ڈالی۔

خبر رساں ادارے اے ایف پی کے مطابق نیوزی لینڈ کے ریگولیٹرز نے گذشتہ روز لیری پیج کی کمپنی ‘کٹی ہاک’ کے ذیلی ادارے ‘زیفائر ایئر ورکس’ کو ایئر ٹیکسی کی آزمائشی پرواز کا اجازت نامہ جاری کیا۔اس الیکٹرک اڑن گاڑی کو ‘کورا’ کا نام دیا گیا ہے، جو  مسافروں کو ٹیکسی کی خدمات فراہم کرنے کے لیے استعمال کی جائے گی۔

اس کے پروں میں ایک درجن چھوٹے پنکھے نصب ہیں، جو اس کے عمودی ٹیک آف اور ہیلی کاپٹر کی طرح لینڈنگ کو یقینی بناتے ہیں۔اسے تیار کرنے والوں کا کہنا تھا کہ اس کی آواز بہت کم ہے، جس کی وجہ سے یہ شہری علاقوں میں مسافروں کو لانے لے جانے کے لیے استعمال ہوسکے گی، جس کے لیے چھتوں اور کار پارکنگز کو لینڈنگ پیڈز کے طور پر استعمال کیا جاسکے گا۔

زیفائر کے چیف ایگزیکٹو فریڈ ریڈ کے مطابق ‘ہم ایک ایسی ماحول دوست گاڑی متعارف کروا رہے ہیں، جو آسانی سے پرواز کر سکتی ہے اور جو ٹرانسپورٹیشن کی دنیا میں جدت کی جانب اگلا قدم ہے’۔فلائنگ ٹیکسی ‘کورا’ کی آزمائش نیوزی لینڈ کے جنوبی جزیرے میں کی گئی، جس میں خودکار پرواز کی صلاحیت رکھنے والے 3 سافٹ وئیرز کو استعمال کیا گیا ہے، اس گاڑی میں 2 مسافروں کے بیٹھنے کی گنجائش ہے۔

Image result for google flying taxi

اڑن گاڑی ‘کورا’ 500 سے 3 ہزار فٹ کی بلندی پر 110 میل فی گھنٹہ کی رفتار سے پرواز کرسکتی ہے جبکہ کسی ناخوشگوار صورتحال میں یہ گاڑی پیراشوٹ بھی کھول سکتی ہے۔زیفائر کے مطابق کورا پروجیکٹ ہمیں اس قابل بنا دے گا کہ ہوائی سفر ہمارے روزمرہ کا معمول بن جائے گا۔

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.