کینیڈا میں اب یہ نشہ آور چیز کھلے عام بکا کرے گی۔یہ کیا ہے؟ جانئے

13

اوٹاوا(نیوز ڈیسک) کینیڈا کے دیگر علاقوں کے بعد آج مشرقی صوبے نیو فاؤنڈ لینڈ میں بھی بھنگ کی قانونی طور پر فروخت کا آغاز ہو گیا، اور یوں کینیڈا اب دنیا میں سب سے بڑا ملک بن گیا ہے جہاں قانونی طور پر بھنگ کی خرید و فروخت ہورہی ہے۔ بھنگ کے شوقین افراد کے لئے اچھی خبر یہ بھی ہے کہ ملک کے مشرقی صوبے میں بھنگ کی فروخت کا آغاز ہوتے ہی حکومت کی جانب سے یہ اعلان بھی کردیا گیا ہے کہ جو لوگ 30 گرام سے کم بھنگ رکھنے کے سبب مجرم قرار پا چکے ہیں ان کی سزائیں معاف کردی جائیں گی اور ان کے خلاف قائم مقدمات ختم ہوجائیں گے کیونکہ یہ مقدار اب قانونی قرار پا چکی ہے۔

کینیڈا میں بھنگ کا طبی مقاصد کے لئے استعمال تو 2001ء سے قانونی قرار دیا جاچکا ہے لیکن وزیراعظم جسٹن ٹروڈو کی حکومت گزشتہ دو سال سے کوشش کررہی تھی کہ تفریحی مقاصد کے لئے بھی بھنگ کو قانونی قرار دیا جائے۔ ان کی حکومت کا موقف ہے کہ معاشرے میں بھنگ کے متعلق بدلتی ہوئی رائے کے مطابق قوانین کو بھی تبدیل کرنے کی ضرورت ہے۔ اس کا ایک اور اہم مقصد بھنگ کی بلیک مارکیٹ کو قانون کے دائرے میں لانا بھی تھا۔

نئے قانون کے ملک بھر میں نفاذ کے بعد کینیڈا میں اب بھنگ نجی دکانداروں سے بھی دستیاب ہوگی جبکہ انٹرنیٹ کی ویب سائٹوں پر آرڈر دے کر اسے گھر پر بھی منگوایا جا سکتا ہے۔ البرٹا اور کیوبک میں بھنگ کی خریداری کے لئے عمر کی حد 18 سال مقرر کی گئی ہے جبکہ دیگر جگہوں پر یہ حد 19 سال ہے۔ اونٹاریو میں ابھی دکانوں پر اس کی دستیابی شروع نہیں ہوئی کیونکہ اس سلسلے میں کچھ قواعد و ضوابط پر کام جاری ہے اور توقع کی جارہی ہے کہ اگلے موسم بہار تک یہاں بھی بھنگ عام دکانوں پر خریداری کے لئے دستیاب ہوگی۔

یاد رہے کہ یوراگوائے وہ پہلا ملک تھا جس نے بھنگ کے استعمال کو قانونی قرار دیا تھا۔ کینڈا جیسے بڑے اور ترقی یافتہ ملک کی جانب سے بھنگ کو قانونی قرار دینے کے فیصلے کا یورپ کے متعدد ممالک باریک بینی سے جائزہ لے رہے ہیں تا کہ اپنے ہاں اس نوعیت کی قانون سازی پر غور کیا جا سکے۔

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.